Categories
Breaking news

گورنر پنجاب نے صدر مملکت کو خط لکھ کر حلف نہ لینے سے متعلق آگاہ کردیا

گورنر پنجاب نے صدر مملکت کو خط لکھ کر حلف نہ لینے سے متعلق آگاہ کردیا

نومنتخب وزیرِاعلیٰ پنجاب حمزہ شہباز کی حلف برداری کے معاملے پر گورنر پنجاب نے صدر مملکت کو خط لکھ کر حلف نہ لینے سے متعلق آگاہ کردیا۔

گورنر پنجاب کی جانب سے صدر کو لکھا گیا خط 6 صفحات پر مشتمل ہے، خط میں حلف نہ لینے سے متعلق آئینی وجوہات سے آگاہ کردیا گیا۔

گورنر پنجاب نےخط میں وزیراعلیٰ عثمان بزدار کے استعفے کو متنازع قرار دیا ہے۔

حمزہ شہباز کی تقریب حلف برداری کی تیاریاں ایک بار پھر دھری کی دھری رہ گئیں

چیئرمین سینیٹ کو لینے کے لیے پنجاب حکومت کا طیارہ صبح 10بجے سے اسلام آباد ایئرپورٹ پر موجود ہے تاہم چیئرمین سینیٹ کے ذرائع کا کہنا ہے کہ انہیں ابھی تک ایوان صدرسےحلف لینے کا اجازت نامہ موصول نہیں ہو سکا۔

خط کے متن میں کہا گیا کہ نو منتخب وزیرِاعلیٰ کا انتخاب متنازع ہے، اپنی ذمہ داریاں آئین کے مطابق ادا کروں گا اس لیے آپ کو آگاہ کر رہا ہوں، ہائیکورٹ نے مجھے آپ کو تحریری طور پر اپنی وجوہات سے آگاہ کرنے کا حکم دیا تھا، میرے خیال میں یہ حکم دینا درست نہیں۔

متن میں کہا گیا کہ تمام ترحالات آپ کے علم میں لا رہا ہوں تاکہ ضروری کارروائی کی جاسکے، عدالت نے ڈپٹی اسپیکر کو وزیراعلیٰ کا انتخاب، شفاف اور غیرجانبدار کروانے کی ہدایت کی تھی۔

خط کے متن میں کہا گیا کہ ڈپٹی اسپیکر نے وزیر اعلیٰ کا انتخاب غیر جانبدار ہو کر نہیں کروایا، ڈپٹی اسپیکر نے غیر منصفانہ، غیر شفاف اور جانبدار طریقے سے وزیرِاعلیٰ کا انتخاب کروایا، ڈپٹی اسپیکر کا اقدام عدالت کی ہدایات اور ان کے حلف کی خلاف ورزی ہے۔

گورنر پنجاب نے حلف کی پاسداری نہیں کی، توہین عدالت کی درخواست دائر کریں گے، ن لیگ

عطاءاللّٰہ تارڑ کاکہنا تھا کہ گورنر نےآئین پاکستان کا وفادار رہنا تھا لیکن انہوں نےگورنر کے عہدے کو بے توقیر کیا، وہ آئین شکن کے طور پر یاد رکھے جائیں گے۔

متن میں کہا گیا کہ ڈپٹی اسپیکر کے اقدام کے باعث وزیرِاعلیٰ کے انتخاب کا عمل آئینی، قانونی حیثیت نہیں رکھتا، موصولہ رپورٹ اور ویڈیوز کے شواہد کی موجودگی میں وزیراعلیٰ کا انتخاب 73 کے آئین کے مطابق نہیں ہے۔

گورنر پنجاب کی جانب سے لکھے گئے خط میں کہا گیا کہ آئین کے آرٹیکل 130 کی شق 5 کے تحت وزیراعلیٰ کی حلف برداری کا وقت مقرر نہیں، سیکریٹری اسمبلی کی رپورٹ وزیراعلیٰ کا انتخاب غیر آئینی ہونے کی دلیل ہے۔

خط کے متن میں کہا گیا کہ بطور گورنر ایک انتہائی متنازع وزیر اعلیٰ سے حلف نہیں لے سکتا، وزیر اعلیٰ کا انتخاب آئینی خلاف ورزیوں کا مثالی کیس ہے، آرٹیکل 130 کی شق 8 کے تحت وزیراعلیٰ نے استعفیٰ گورنر کے نام تحریر کرنا تھا، وزیر اعلیٰ عثمان بزدار کے وزیراعظم کے نام استعفے پر میری آئینی رہنمائی فرمائی جائے۔

متن میں کہا گیا کہ پنجاب میں وزیرِاعلیٰ کے متنازع الیکشن کے حل کے لیے بھی میری آئینی رہنمائی کی جائے۔

قومی خبریں سے مزید

Original Article

Leave a Reply

Your email address will not be published.