Categories
Breaking news

کراچی: بذریعہ، فیس بک، واٹس ایپ اسلحہ فروخت کرنیوالا گروہ گرفتار

فیس بک اور واٹس ایپ کے ذریعے اسلحہ فروخت کرنے والے گرفتار ملزمان سے برآمد پستول کی گولیاں—تصویر بشکریہ CTD
فیس بک اور واٹس ایپ کے ذریعے اسلحہ فروخت کرنے والے گرفتار ملزمان سے برآمد پستول کی گولیاں—تصویر بشکریہ CTD

سندھ پولیس کے کاؤنٹر ٹیررازم ڈیپارٹمنٹ (سی ٹی ڈی) نے فیس بک اور واٹس ایپ کے ذریعے اسلحہ فروخت کرنے والے گروہ کے 4 ملزمان کو کراچی سے گرفتار کر لیا۔

ملزمان کے قبضے سے 18 جدید پستول اور بڑی تعداد میں گولیاں برآمد ہوئی ہیں۔

یہ کارروائی انسپکٹر جنرل پولیس (آئی جی) سندھ غلام نبی میمن کی ہدایت پر قائم کیے گئے سی ٹی ڈی کے خصوصی ویپن ٹریفیکنگ اینڈ مانیٹرنگ سیل نے کی ہے۔

فیس بک اور واٹس ایپ کے ذریعے اسلحہ فروخت کرنے والے گرفتار ملزمان سے برآمد کارتوس—تصویر بشکریہ CTD
فیس بک اور واٹس ایپ کے ذریعے اسلحہ فروخت کرنے والے گرفتار ملزمان سے برآمد کارتوس—تصویر بشکریہ CTD

سی ٹی ڈی کے انچارج راجہ عمر خطاب اور مظہر مشوانی نے ایک مشترکہ پریس کانفرنس میں اس سلسلے میں میڈیا کو تفصیلات سے آگاہ کیا۔

راجہ عمر خطاب کے مطابق پشاور، درہ آدم خیل، ڈی آئی خان اور دیگر اضلاع کے اسلحہ ڈیلرز اور دکاندار اس غیر قانونی اسمگلنگ میں ملوث ہیں۔

فیس بک اور واٹس ایپ کے ذریعے اسلحہ فروخت کرنے والے گرفتار ملزمان سے برآمد اسلحہ—تصویر بشکریہ CTD
فیس بک اور واٹس ایپ کے ذریعے اسلحہ فروخت کرنے والے گرفتار ملزمان سے برآمد اسلحہ—تصویر بشکریہ CTD

انہوں نے بتایا کہ ملزمان کا طریقہ کار یہ ہے کہ وہ فیس بک کے ذریعے غیر قانونی اسلحے کے کاروبار کی تشہیر کرتے تھے اور فیس بک اور واٹس اپ پر اسلحے کی نمائش کرتے تھے۔

سی ٹی ڈی کے انچارج راجہ عمر خطاب کے مطابق گرفتار ملزمان میں عظمت اللّٰہ، بشیر خان، فضل جان اور فرمان اللّٰہ شامل ہیں۔

سی ٹی ڈی کے انچارج راجہ عمر خطاب اور مظہر مشوانی پریس کانفرنس کرتے ہوئے—تصویر بشکریہ CTD
سی ٹی ڈی کے انچارج راجہ عمر خطاب اور مظہر مشوانی پریس کانفرنس کرتے ہوئے—تصویر بشکریہ CTD

ان کا کہنا ہے کہ جو افراد اسلحہ خریدنے میں دلچسپی رکھتے ہیں وہ ان لوگوں کو واٹس ایپ گروپ میں شامل کر لیتے ہیں اور قیمت طے کرنے کے بعد رقم کا 50 فیصد ایزی پیسہ، جاز کیش یا آن لائن ٹرانسفر کر دیتے ہیں، بقیہ رقم ڈیلیوری کے وقت وصول کی جاتی ہے۔

سی ٹی ڈی کے انچارج راجہ عمر خطاب نے یہ بھی بتایا ہے کہ جب تمام معاملات طے پا جاتے ہیں تو یہ غیر قانونی اسلحہ ڈیلر اپنے ایجنٹ کے ذریعے بذریعہ بس کراچی بھیجتے ہیں، کراچی یا ملک کے کسی بھی علاقے میں اسلحہ پہنچانے کے لیے اپنا کارندہ خریدار کا نمبر دے کر روانہ کرتے ہیں، وہی شخص ڈیلیوری دے کر باقی رقم وصول کرتا ہے۔

قومی خبریں سے مزید

Original Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *