Categories
Breaking news

ڈونلڈ ٹرمپ مواخذے کی کارروائی سے دوسری مرتبہ بری

Advertisement

ڈونلڈ ٹرمپ

امریکی سینیٹ نے سابق صدر ڈونلڈ ٹرمپ کو دارالحکومت میں ہونے والےپُر تشدد احتجاج میں کردار ادا کرنے پر ان کے خلاف ہونے والی مواخذے کی کارروائی سے بری کردیا، یہ ڈونلڈ ٹرمپ کے خلاف ایک سال کے عرصے میں مواخذے کی دوسری کارروائی تھی۔

برطانوی خبررساں ادارے رائٹرز کی رپورٹ کے مطابق سابق صدر کے خلاف بغاوت پر اکسانے کے الزام میں ٹرائل 5 روز تک چلا اور ان کے خلاف ووٹوں کی تعداد 43 کے مقابلے 57 ووٹس رہی جبکہ انہیں سزا دینے کے لیے 2 تہائی اکثریت کی ضرورت تھی۔

ووٹنگ کے عمل میں 7 ریپبلکن سینیٹرز نے ڈیموکریٹس کی جانب سے ڈونلڈ ٹرمپ کو سزا دینے کی حمایت میں ووٹ ڈالا۔

واضح رہے کہ سابق صدر 20 جنوری کو اپنے عہدے سے سبکدوش ہوگئے تھے اس لیے مواخذے کی کارروائی کو انہیں عہدےسے ہٹانے کے لیے استعمال نہیں کیا جاسکتا تھا لیکن ڈیموکریٹس کو امید تھی کہ وہ دارلحکومت کے پُر تشدد گھیراؤ کا ذمہ دار ٹھہرانے پر انہیں سزا دلانے میں کامیاب ہوجائیں گے جس سے وہ دوبارہ سرکاری عہدے پر نہیں آسکیں گے۔

سابق امریکی صدر نے اشتعال انگیز تقریر کی تھی جس کے فوراً بعد ان کے حامیوں نے 6 جنوری کو امریکی دارالحکومت کے کیپٹل ہل پر چڑھائی کردی تھی۔

ڈونلڈ ٹرمپ کے اٹارنی نے مؤقف اپنایا کہ ریلی میں دیے گئے ان کے بیان کو آئین کے تحت آزادی اظہار رائے کا تحفظ حاصل ہے اور انہیں اس کارروائی میں مناسب طریقہ کار نہیں دیا گیا۔

سابق امریکی صدر کے خلاف ان کی اپنی جماعت کے جن سینیٹرز نے ووٹ دیے ان میں رچرڈ بُر، بِل کیسیڈی، سوسان کولِنز، بین ساسے، پیٹ ٹومی اور لیزا مرکوسکی شامل ہیں۔

خیال رہے کہ اس سے قبل ریپبلکنز اراکین سینیٹ نے ڈونلڈ ٹرمپ کو 5 فروری 2020 کو مواخذے سے بچایا تھا اور اس وقت ان کی جماعت کے صرف ایک سینیٹر مِٹ رومنی نے ان کی سزا اور عہدے سے ہٹانے کے حق میں ووٹ دیا تھا۔

سینیٹ کے اکثریتی رہنما مِچ میک کونیل نے سزا کے خلاف ووٹ دیا لیکن ان فیصلہ آنے کے بعدسابق صدر کے خلاف سخت تنقیدی بیان بھی دیا۔

انہوں نے کہا کہ 'اس روز جو واقعہ ہوا اس میں ڈونلڈ ٹرمپ کے عملی اور اخلاقی طور پر ذمہ دار ہونے میں کوئی سوال پیدا نہیں ہوتا، وہ افراد جنہوں نے عمارت پر دھاوا بولا وہ سمجھتے تھے وہ یہ سب اپنے صدر کی خواہش اور ہدایت پر کررہے ہیں'۔

خیال رہے کہ ڈونلڈ ٹرمپ وہ تیسرے امریکی صدر ہیں جن کا امریکی ایوان نمائندگان نے مواخذہ کیا جبکہ وہ پہلے صدر ہیں جن کے خلاف دوسری مرتبہ مواخذے کی کارروائی ہوئی اور جنہوں نے عہدہ صدارت چھوڑنے کے بعد بھی اس کارروائی کا سامنا کیا۔

Advertisement

امریکی ایوانِ نمائندگان نے 13 جنوری کو ڈونلڈ ٹرمپ کے خلاف مواخذے کے واحد آرٹیکل کی منظوری دی تھی جبکہ اس میں 10 ریپبلکن اراکین نے بھی ڈیموکریٹس کا ساتھ دیا تھا۔

سابق امریکی صدر کے خلاف پہلا مواخذہ 2019 میں یوکرین کے صدر کے ساتھ روابط اور اختیارات کے ناجائز استعمال کے تحت شروع ہوا تھا۔

ڈونلڈ ٹرمپ کے خلاف پہلا مواخذہ یوکرین میں تعینات امریکی سفیر کی جانب سے ان پر لگائے گئے الزامات کے بعد ہوا تھا، جس میں امریکی سفیر نے ڈونلڈ ٹرمپ پر سنگین الزامات عائد کرتے ہوئے کہا تھا کہ وائٹ ہاؤس نے جو بائیڈن کے خلاف کارروائی کے لیے یوکرین پر دباؤ ڈالا تھا۔

مذکورہ مواخذے میں خوش قسمتی سے سینیٹ نے ڈونلڈ ٹرمپ کو کلیئر قرار دیا تھا، اگر ان کے خلاف مواخذہ آجاتا تو انہیں عہدہ چھوڑنا پڑ سکتا تھا۔

کیپٹل ہل میں کیا ہوا تھا؟

خیال رہے کہ نومبر 2020 میں ہونے والے امریکی انتخابات میں شکست کے بعد سے ڈونلڈ ٹرمپ اپنے ووٹ چوری ہونے کے الزامات عائد کررہے تھے۔

بعد ازاں 6 جنوری کو واشنگٹن ڈی سی میں صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے حامیوں نے امریکی صدارتی انتخاب کے نتائج میں تبدیلی اور منتخب صدر جو بائیڈن کی جگہ ڈونلڈ ٹرمپ کو برقرار رکھنے کی کوشش میں کیپیٹل ہل کی عمارت پر دھاوا بول دیا تھا اور پرتشدد واقعات کے نتیجے میں 4 افراد ہلاک ہو گئے تھے۔

ڈونلڈ ٹرمپ کے حامیوں کے اس حملے کے دوران کیپیٹل ہل (امریکی ایوان نمائندگان) کی عمارت میں موجود قانون دان اپنی جانیں بچاتے ہوئے ڈیسکوں کے نیچے چھپنے پر مجبور ہو گئے تھے۔

اس دوران فائرنگ کے نتیجے میں کیپیٹل ہل کے اندر ایک خاتون ہلاک ہو گئیں جس کے بعد میئر نے تشدد میں کمی کے لیے شام کے وقت واشنگٹن میں کرفیو نافذ کردیا۔

امریکی دارالحکومت میں ناخوشگوار مناظر دیکھ کر دنیا کے مختلف ممالک کے سربراہان اور حکومت نے مذمت کی تھی جبکہ فیس بک نے امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کو اپنے سوشل میڈیا ایپس پر غیر معینہ مدت کے لیے بلاک کردیا تھا۔

دوسری جانب امریکی ایوانِ نمائندگان نے اس کارروائی کے لیے اکسانے پر سابق امریکی صدر کے خلاف مواخذے کی کارروائی کی تھی

Advertisement

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *