Categories
Breaking news

ڈاؤ یونیورسٹی میں پاکستان کی تاریخ کا پہلا جگر کا آٹو ٹرانسپلانٹ کر لیا گیا

Advertisement

ڈاؤ یونیورسٹی آف ہیلتھ سائنسز کراچی میں جگر کا پہلا آٹو ٹرانسپلانٹ کر لیا گیا ہے، اس طریقہ علاج میں کینسر سے متاثرہ جگر کو جسم سے نکال کر کینسر کو علیحدہ کیا جاتا ہے اور تباہ ہوجانے والی شریانوں کو مصنوعی شریانوں سے تبدیل کر کے جگر کو واپس جسم میں لگا دیا جاتا ہے۔بلوچستان کے علاقے ژوب سے تعلق رکھنے والا 28 سالہ مریض صادق شاہ جگر کے کینسر میں مبتلا تھا، پروفیسر ڈاکٹر فیصل ڈار، ڈاکٹر جہانزیب اور ڈاکٹر محمد اقبال اور دیگر ماہرین کی زیر نگرانی مریض کا جگر نکال کر اسے کینسر سے صاف کر کے دوبارہ لگا دیا گیا، مریض مکمل طور پر روبہ صحت ہے۔اس بات کا انکشاف ڈاؤ یونیورسٹی آف ہیلتھ سائنسز کے وائس چانسلر پروفیسر سعید قریشی نے کیا۔
ڈاؤ یونیورسٹی آف ہیلتھ سائنسز کے وائس چانسلر پروفیسر سعید قریشی کے مطابق آٹو ٹرانسپورٹ میں مریض کا جگر باہر نکال کر اسے کینسر سے پاک کیا جاتا ہےان کا مزید کہنا تھا کہ آٹو ٹرانسپلانٹ پاکستان کے نامور سرجن پروفیسر فیصل ڈار کی نگرانی میں کیا گیا، مریض کے جگر میں مصنوعی شریانیں ڈال کر جگر واپس لگا دیا گیا۔پروفیسر سعید قریشی نے مزید بتایا کہ دنیا بھر میں اس وقت صرف 20 آٹو ٹرانسپلانٹ ہوئے ہیں، یہ انتہائی حساس آپریشن ہے اور اس میں انتہائی احتیاط اور مہارت کی ضرورت ہوتی ہے۔ان کا کہنا تھا کہ اس سال انہوں نے ڈاؤ میں تین جگر کے ٹرانسپلانٹ کر لیے ہیں۔انہوں نے بتایا کہ ڈاکٹر پروفیسر فیصل ڈار کی نگرانی میں ڈاکٹر جہانزیب اور ڈاکٹر اقبال سمیت دیگر ماہرین نے ڈاؤ یونیورسٹی میں 28 ٹرانسپلانٹ ہوچکے ہیں، جن میں سے 6 ٹرانسپلانٹ اس سال کے پہلے تین مہینوں میں کیے گئے ہیں، جبکہ ڈاؤ یونیورسٹی میں اب ہر مہینے تین سے چار جگر کے ٹرانسپلانٹ کیے جائیں گے۔اگلے چند ہفتوں میں مزید تین افراد کے لئے لیور ٹرانسپلانٹ کرنے جا رہے ہیں، پروفیسر سعید قریشی نے بتایا اور مزید کہا کہ اب پاکستانی مریضوں کو جگر کے ٹرانسپلانٹ کے لیے دیگر ممالک میں جانے کی ضرورت پیش نہیں آئے گی۔اس موقع پر جگر کے آٹو ٹرانسپلانٹ کے مریض صادق شاہ کا کہنا تھا کہ ان کی زندگی بچنے کے امکانات کم تھے لیکن ڈاؤ یونیورسٹی کے ماہرین نے ان کا علاج کیا اور اب وہ مکمل صحت یابی کے قریب ہیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *