Categories
Breaking news

ڈاؤ میڈیکل کالج کے قیام کے 75 سال مکمل، گولڈن جوبلی تقریب، پچھتر کبوتربھی آزاد کیے گئے

Advertisement
Advertisement

 ڈاؤ میڈیکل کالج

شہر قائد میں قائم ڈاؤ میڈیکل کالج کے قیام کے 75 سال مکمل ہو گئے، گولڈن جوبلی کی تقریب کے موقع پر پچھتر کبوتر آزاد کیے گئے اور ڈاؤ کے لوگو سے مزین غباروں کے 75گچھے ہوا میں چھوڑے گئے۔

ڈاؤ میڈیکل کالج کی گولڈن جوبلی تقریب میں کو وِڈ نائنٹین وبا کے باعث محدود تعداد میں سینئرز کو مدعو کیا گیا، تقریب بھی سادہ اور کھلی فضا میں رکھی گئی، تقریب میں ڈائمنڈ جوبلی کے لوگو سے مزین کیک بھی کاٹا گیا۔

تقریب سے خطاب کرتے ہوئے وائس چانسلر پروفیسر محمد سعید قریشی نے کہا اسپینش فلو کے صدیوں بعد اب کرونا وائرس نے دنیا کو ہلا کر رکھ دیا ہے، ہم پہلے سے مختلف پیتھالوجی کے حامل نامعلوم وجود سے نبرد آزما ہیں۔

انھوں نے کہا ڈاؤ ان چند اداروں میں سے ایک ہے جس نے وبا کے دوران فرنٹ لائن ورکر کا کردار ادا کیا، یہ کالج اب عالمی پہچان رکھتا ہے، اس سے ملحقہ اداروں میں زیر تعلیم طلبہ کی تعداد 8 ہزار ہے۔

تقریب کے شرکا میں کالج کے سابق پرنسلز، سینئر اساتذہ اور سابق طالب علم شامل تھے، پروفیسر ایم اے عالمانی نے کہا ڈاؤ میڈیکل کالج اب ایک عظیم ادارے میں تبدیل ہو چکا ہے، پروفیسر غفار بلو نے یادیں دہراتے ہوئے کہا کہ 1954 میں ڈاؤ میڈیکل کالج میں داخلہ لیا تو یہ ایک بچہ تھا، آج یہ دادا، بلکہ پر دادا بن چکا ہے۔

ڈاکٹر ٹیپو سلطان نے کہا آج اتنے سارے سینئرز کا جمع ہونا ایک خواب لگتا ہے، ایک سہانا خواب، پروفیسر اقبال میمن نے کہا پرانے لوگوں کی یادیں سہانی ہیں، ریسرچ کے شعبے میں ڈاؤ کا نام بن چکا ہے، پروفیسر ذکی الدین اون والا نے کہا کہ اس وقت تو اساتذہ کی کہکشاں ہے، ڈی ایم سی کے طلبہ نے پی ڈبلیو اے کے ذریعے انسانیت کی خدمت کی اعلیٰ مثال قائم کی۔

Advertisement

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *