Categories
Breaking news

پی ٹی آئی نے عبدالقادر سے سینیٹ کا ٹکٹ واپس لے لیا

Advertisement
Advertisement

وزیر اعظم عمران خان

پاکستان تحریک انصاف نے سینیٹ انتخابات میں بلوچستان سے جنرل نشست پر انتخاب لڑنے کے لیے تعمیراتی شعبے سے وابستہ بزنس ٹائیکون عبدالقادر سے ٹکٹ واپس لے لیا۔

اس حوالے سے وزیر اعظم کے معاون خصوصی برائے سیاسی رابطے شہباز گل نے ٹوئٹر پر آگاہ کیا کہ عبد القادر سے ٹکٹ واپس لینے کی تصدیق کی۔

انہوں نے بتایا کہ عبد القادر سے سینیٹ کا ٹکٹ واپس لے کر ظہور آغا کو جاری کیا جارہا ہے۔

انہوں نے وزیر اعظم عمران خان کا حوالہ دے کر کپتان ہمیشہ اپنے پارٹی ورکر کی آواز سنتے ہیں۔

قبل ازیں پی ٹی آئی پارلیمانی بورڈ کے رکن وفاقی وزیر سائنس و ٹیکنالوجی فواد چوہدری نے بذریعہ ٹوئٹ عبدالقادر کی نامزدگی کی تصدیق کی تھی اور کہا تھا کہ ’پی ٹی آئی نے بلوچستان سے سینیٹ انتخاب کے لیے عبدالقادر کو پارٹی ٹکٹ دیا ہے‘۔

دوسری جانب پی ٹی آئی کی صوبائی قیادت نے بلوچستان میں پارلیمانی لیڈرز اور پارٹی کے ایم پی ایز سے مشاورت کے بغیر فیصلہ لینے پر تحفظات کا اظہار کیا تھا۔

پی ٹی آئی میں موجود ذرائع کا کہنا تھا کہ عمران خان کی سربراہی میں مرکزی پارلیمانی بورڈ نے عبدالقادر کو پارٹی ٹکٹ دیتے وقت بلوچستان اسمبلی میں پارٹی کے پارلیمانی رہنماؤں سردار یار محمد رند اور دیگر سے مشاورت نہیں کی۔

پی ٹی آئی بلوچستان کے ترجمان آصف ترین کا کہنا تھا کہ صوبائی پارلیمانی بورڈ اور قیادت نے عبدالقادر کا نام تجویز نہیں کیا تھا کیونکہ یہ پی ٹی آئی سے تعلق نہیں رکھتے۔

انہوں نے بتایا تھا کہ ’پارٹی کے صوبائی رہنماؤں اور زونل سربراہاں نے سینیٹ انتخابات کے لیے ٹکٹیں دینے پر اپنے تحفظات کا اظہار کیا ہے‘۔

واضح رہے کہ سینیٹ کے 104 اراکین میں سے 52 اراکین اپنی 6 سالہ مدت ختم ہونے کے بعد 11 مارچ کو ریٹائر ہوجائیں گے جس میں قبائلی اضلاع کے 8 میں سے 4 سینیٹر بھی شامل ہیں اور اب قبائلی اضلاع کے خیبرپختونخوا میں ضم ہونے کی وجہ سے یہ چار نشستیں پُر نہیں کی جاسکتیں جس سے سینیٹ کی مجموعی نشستیں کم ہو کر 100 رہ جائیں گی۔

48 اراکین سینیٹ کو منتخب کرنے کے لیے پولنگ 3 مارچ کو ہوگی جس میں خیبرپختونخوا اور بلوچستان سے 12، 12 سینیٹرز، پنجاب اور سندھ سے 11،11 جبکہ اسلام آباد سے 2 سینیٹرز کو منتخب کیا جائے گا۔

پولنگ میں چاروں صوبوں سے عام نشستوں پر 7 اراکین، 2 نشستوں پر خواتین، 2 نشستوں پر ٹیکنوکریٹس کو چُنا جائے گا جبکہ خیبرپختونخوا اور بلوچستان سے اقلیتی نشست پر ایک، ایک رکن منتخب ہوگا۔

خیال رہے کہ 11 مارچ کو اپنی 6 سالہ مدت ختم ہونے پر ریٹائر ہونے والے سینیٹرز کی 65 فیصد تعداد اپوزیشن جماعتوں سے تعلق رکھتی ہے۔

Advertisement

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *