Categories
Breaking news

قونصل جنرل کی عدم موجودگی میں سفیر محترم کو بارسلونا آنا چاہیئے تھا،ملک ارشد نعیم

Advertisement
Advertisement

بارسلونا(دوست نیوز)سانحہ بارسیلونیتاجس میں تین پاکستانیوں کی شہادت ہوئی ،اس المناک واقعہ پر قونصل جنرل عمران علی کی بیماری کے باعث عدم دستیابی کی صورت میں میڈرڈ میں پاکستانی سفارت خانے میں متعین سفیر محترم خیام اکبر کو بارسلونا آنا چاہیئے تھااور متاثرین کے ساتھ اظہار یکجہتی کرنا چاہیئے تھا،ان خیالات کا اظہار سماجی کارکن ملک ارشد نعیم نے میڈیا سے بات کرتے ہوئے کیا۔ انہوں نے کہا کہ خدانخواستہ ایسا واقعہ اگر پاکستان میں کسی اسپانش کے ساتھ ہو جاتا تو ہمارا پی ایم بھی وہاں پہنچ جاتا۔اسپین میں پاکستانی حکومتی اداروں کی سرد مہری قابل مذمت ہے۔ جبکہ پاکستانی کمیونٹی کی دوبڑی فیڈریشنز اور سماجی کارکنوں نے اپنا بھر پور کردار ادا کیا اور متاثرہ خاندان کے ساتھ کھڑے رہے۔انہوں نے کہا کہ قونصل خانے میں پرائیویٹ کام کرنے والی خواتین ہمارے لئے باعث عزت ہیں اور ان کا احترام اولین ترجیح ہے۔لیکن انہیں بھی یہ خیال کرنا چاہیئے کہ وہ کسی پرائیویٹ فرم میں کام نہیں کر رہی وہ حکومت پاکستان کے ادارے میں کام کررہی ہیں اور اس ادارے کا ایک مقام ہے۔ایسا سانحہ کسی کے بھی ساتھ پیش آسکتا ہے۔ اس لئے احتجاج ضروری تھا۔تاکہ سفیر محترم خیام اکبر صاحب مستقبل میں ایسی ٹیم تشکیل دیں جو ان ہنگامی معاملات کو فوری دیکھے۔احتجاج یا اختلاف کا مقصد ہرگز کسی شخص کو تنقید کرنا نہیں ہے۔بلکہ بنائی گئی غلط پالیسی کی نشاندہی کرنا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ جس طرح تین سے پانچ ہفتوں کا کہا جارہا تھا کہ نادرہ اتنے وقت کے بعد فنگر پرنٹس دے گی،وہی کام ایک احتجاج نے دو دن میں کردیا۔ اب بہت جلد میتیں ورثا کے حوالے ہونگی اور پاکستان میں ان کی تدفین ہوگی۔

Advertisement

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *