Categories
Breaking news

فواد چوہدری و دیگر ارکانِ اسمبلی پر درج مقدمات کا ریکارڈ طلب

—فائل فوٹو
—فائل فوٹو

اسلام آباد ہائی کورٹ نے پی ٹی آئی رہنما فواد چوہدری اور دیگر کو ہراساں کرنے کے خلاف کیس کی سماعت کرتے ہوئے ارکانِ اسمبلی کے خلاف درج مقدمات کا ریکارڈ طلب کر لیا۔

دورانِ سماعت چیف جسٹس اطہر من اللّٰہ نے استفسار کیا کہ اسپیکر صاحب نے کیا رپورٹ دی ہے؟ اسپیکر نے علی وزیر کا کیا کیا؟ ابھی تو آپ سب درخواست گزار پارلیمنٹ کے ممبر ہیں، کل تو سپریم کورٹ نے بھی اس حوالے سے کہہ دیا ہے۔

وکیل فیصل چوہدری نے جواب دیا کہ جی سر، تکنیکی طور پر تو یہی ہے۔

فواد چوہدری کا نام بھی سننا پسند نہیں کرتا، وکیل حامد خان

حامد خان نے کہا کہ عمران خان کی پوزیشن یہ تھی کہ میں نے توہین عدالت نہیں کی ہے، ہم نے کہا ہے کہ اگر عدالت کو یہ تاثر ملا ہے تو ہم اس کی معذرت کرتے ہیں، حلف نامے میں بھی یہی لکھیں گے کہ کوئی توہین عدالت نہیں کی۔

چیف جسٹس اطہر من اللّٰہ نے کہا کہ تکنیکی نہیں، آپ ممبر ہیں، آپ کی ذمے داری ہے کہ جب تک ڈی نوٹیفائی نہ ہوں پارلیمنٹ جا کر حلقے کے عوامی مسائل پر بات کریں۔

وکیل فیصل چوہدری نے کہا کہ اسلام آباد ٹول پلازہ سے پارلیمنٹ تک جانا آسان نہیں، توہینِ مذہب، غداری اور دہشت گردی کے کیسز سے گزر کر جانا پڑتا ہے۔

چیف جسٹس اطہر من اللّٰہ نے کہا کہ ان معاملات کا سیاسی حل نہ ہوا تو ملک میں انتشار ہو گا۔

اسلام آباد ہائی کورٹ نے ارکانِ اسمبلی کے خلاف درج مقدمات کا ریکارڈ طلب کر لیا۔

چیف جسٹس اطہر من اللّٰہ نے ہدایت کی کہ سیکریٹری داخلہ 3 ہفتوں میں ریکارڈ عدالت میں پیش کریں، اگر ریکارڈ پیش نہ ہوا تو سیکریٹری داخلہ خود پیش ہوں۔

قومی خبریں سے مزید

Original Article

Leave a Reply

Your email address will not be published.