Categories
Breaking news

فارن فنڈنگ کیس، PTIوکیل کی آج دلائل دینے سے معذرت

پی ٹی آئی غیر ملکی فنڈنگ کیس میں پی ٹی آئی کے وکیل انور منصور نے کہا کہ مجھے کورونا ہوا تھا ، رپورٹ نیگیٹو ہے لیکن مجھے بخار ہے ، میں آج دلائل نہیں دے سکوں گا، وکیل اکبر ایس بابر نے کہا کہ ابھی تک اسکروٹنی کمیٹی کی رپورٹ کے 8 والیم کی مکمل کاپیاں نہیں دی گئیں، چیف الیکشن کمشنر نے کہا کہ اب سیکریٹری الیکشن کمیشن معاملے کو دیکھیں گے کہ رپورٹس کی کاپی درخواست گزار کو فراہم کی جائیں ۔

پی ٹی آئی غیر ملکی فنڈنگ کیس کی الیکشن کمیشن میں چیف الیکشن کمشنر سکندر سلطان راجہ کی سربراہی میں کیس کی سماعت ہوئی ، درخواست گزار اکبر ایس بابر الیکشن کمیشن میں پیش ہوئے۔

پی ٹی آئی کے وکیل انور منصور نے کہا کہ مجھے بخار ہے میں آج دلائل نہیں دے سکوں گا ، جبکہ اکبر ایس بابر کے وکیل احمد حسن نے کہا کہ ابھی تک اسکروٹنی کمیٹی کی رپورٹ کے آٹھ والیم کی کاپیاں نہیں دی گئی ، مجھے کہا کہ اپنے درخواست گزار کو لیکر آئیں ۔

وکیل نے بتایا کہ اکبر ایس بابر کو لیکر آیا ، صبح سے بٹھائے رکھا پھر شام کو دستاویزات دیئے ہیں وہ بھی مکمل نہیں ہیں، 18 جنوری کا آرڈر تھا ، مجھے 19 جنوری کو بلاتے ، لیکن والیمز دینے مجھے 30 جنوری کو بلایا گیا ۔

احمد حسن نے کہاکہ کمیشن کے احکامات پر عملدرآمد نہیں کیا گیا ، ڈی جی لاء صاحب الیکشن کمیشن کے آرڈر ماننا نہیں چاہتے ، ڈی جج لاء صاحب ہم سے بہت مایوس کن سلوک کر رہے ہیں ، ڈی جی لاء نے کہا کہ آج شام تک باقی والیمز بل فراہم کر دیں گے، وکیل نے کہا کہ اسکروٹنی کمیٹی کی رپورٹ میں سقم ہے ، اس پر میں نے جواب جمع کرایا ہے۔

چیف الیکشن کمشنر نے کہا کہ اسکروٹنی کمیٹی کی رپورٹ پر جوابدہ کا جواب آنا ہے ،کیس میں تاخیر نہیں ہو رہی ، ابھی دلائل آنے ہیں ، انسانی طور پر جتنا ممکن ہوا کل الیکشن کمیشن کے عملے نے رپورٹ کی کاپیاں فراہم کیں، سیکرٹری الیکشن کمیشن اب معاملے کو دیکھیں گے کہ الیکشن کمیشن کے احکامات پر عملدرآمد ہو، جوابدہ اور درخواست گزار اپنے جوابات کی کاپی بھی ایک دوسرے کو فراہم کر دیں ۔

اس کے بعد الیکشن کمیشن نے کیس کی سماعت 9 فروری تک ملتوی کر دی۔

قومی خبریں سے مزید

Original Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *