Categories
Breaking news

عمران خان نے اپنی پوسٹ میں علامہ اقبال کی کونسی دُعا کا تذکرہ کیا؟

Advertisement
عمران خان نے علامہ اقبال کی کونسی دُعا کا تذکرہ کیا؟

پاکستان کے وزیراعظم عمران خان کہتے ہیں کہ علامہ اقبال کی دُعا ’لب پہ آتی ہے‘ کے الفاظ بچوں کے لیے ہنمائی کا ایک طاقتور ذریعہ ہیں۔

سوشل میڈیا سائٹ انسٹاگرام پر عمران خان نے اپنی ایک یادگار تصویر شیئر کی ہے جس میں وہ سفید رنگ کی قمیض شلوار میں ملبوس ہیں۔

Table of Contents

x
Advertisement

View this post on Instagram

Allama Iqbal’s words were a powerful source of guidance when Pakistan came into existence in 1947 and during its early years. Every morning Radio Pakistan broadcast his prayer for children that began: لب پہ آتی ہے دعا بن کے تمنا میری زندگی شمع کی صورت ہو خدایا میری Iqbal's words left a permanent imprint on the minds of the children who heard it. However, over time, this prayer ceased to be broadcast, and today there are very few children who are familiar with it.

Advertisement

A post shared by Imran Khan (@imrankhan.pti) on

وزیراعظم عمران خان نے تصویر شیئر کرتے ہوئے کیپشن میں لکھا کہ ’جب 1947 میں پاکستان وجود میں آیا تو شاعر مشرق علامہ اقبالؒ کے الفاظ رہنمائی کا ایک طاقتور ذریعہ تھے۔‘

عمران خان نے کہا کہ ’اس وقت ہر صبح ریڈیو پاکستان بچوں کے لیے علامہ اقبالؒ کی دعا نشر کرتا تھا۔‘

عمران خان کا نوجوانوں کو اقبال کی تحریریں پڑھنے کا مشورہ

پاکستان کے موجودہ وزیراعظم عمران خان کہتے ہیں کہ شاعر مشرق علامہ اقبالؒ کے طاقتور الفاظ نوجوان پاکستانیوں کو شاہین بننے کا چیلنج دیتے ہیں۔

وزیراعظم نے شاعر مشرق کی معروف دُعا کے چند بول کچھ یوں لکھے:

لب پہ آتی ہے دعا بن کے تمنا میری
زندگی شمع کی صورت ہو خدایا میری

اُن کا کہنا تھا کہ ’اقبال کے الفاظ نے سننے والے بچوں کے ذہنوں پر مستقل نقوش چھوڑا، تاہم وقت گزرنے کے ساتھ اس دعا کا نشر ہونا بند ہوگیا اور آج بہت کم بچے ہیں جو اس دُعا سے واقف ہیں۔‘

وزیراعظم عمران خان کی والدہ اور نانی کی تصویر مقبول

پاکستان کے موجودہ وزیر اعظم عمران خان کی والدہ اور نانی کی تصویر سوشل میڈیا پر وائر ل ہوگئی ہے جسے بےحد مقبولیت حاصل ہو رہی ہے۔

یاد رہے کہ اس سے قبل عمران خان نے اپنی ایک اور انسٹاگرام پوسٹ میں کہا تھا کہ آج جب پاکستانی نوجوان ایسے معاشرے میں رہ رہے ہیں جہاں اخلاقی خلاء کا فرق ہے تو اُنہیں علامہ اقبالؒ کے کثیر الجہتی فلسفہ پر مبنی گہری اور جامع تعلیم کی اشد ضرورت ہے۔

View this post on Instagram

Today when Pakistani youth are living in a society in which there is a gaping ethical vacuum, they are in critical need of a deep and comprehensive education based upon Iqbal's multi-faceted philosophy. Iqbal's work can be a source of profound guidance to help young Pakistanis as they seek to understand the nature of their own identity and their own religion. His powerful words challenge them to become a shaheen, which hunts for its food, rather than a vulture, which preys on the dead.

A post shared by Imran Khan (@imrankhan.pti) on

اُن کا کہنا تھا کہ شاعر مشرق کے طاقتور الفاظ پاکستان کے نوجوانوں کو شاہین بننے کا چیلنج دیتے ہیں اور نوجوان پاکستانیوں کی مدد کے لیے علامہ اقبالؒ کی تحریریں گہری رہنمائی کا ذریعہ ثابت ہوسکتی ہیں۔

قومی خبریں سے مزید

Original Article

Advertisement

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *