Categories
Breaking news

ظاہر شدہ اکاؤنٹس سے پیسہ منتقل ہونا قابل غور بات ہوسکتی ہے، چیف الیکشن کمشنر

فائل فوٹو
فائل فوٹو

پی ٹی آئی ممنوعہ فارن فنڈنگ کیس میں چیف الیکشن کمشنر نے ریمارکس دیئے کہ ظاہرشدہ اکاؤنٹس سے پیسہ منتقل ہونا قابل غور بات ہوسکتی ہے، وکیل اکبر ایس بابر نے کہا کہ اسکروٹنی کمیٹی نے اپنے کام کا حق ادا نہیں کیا۔

الیکشن کمیشن میں پی ٹی آئی ممنوعہ فارن فنڈنگ کیس کی سماعت ہوئی ، اکبر ایس بابر کے وکیل احمد حسن نے آج اپنے دلائل مکمل کیے، جبکہ پی ٹی آئی کے وکیل انورمنصور 13 اپریل کو دلائل کا آغاز کریں گے۔

وکیل پی ٹی آئی انور منصور نے آج کی سماعت کے آغاز پر کہا کہ اکبر ایس بابر کے حق دعویٰ پر کیس ہائیکورٹ میں زیر التوا ہے، ہائیکورٹ نےدرخواست سماعت کیلئے منظور کرتے ہوئے کل مقررکی ہے، ممبر بلوچستان شاہ محمد جتوئی نے کہا کہ ہائیکورٹ کا حکم نامہ ہمارے علم میں ہے۔

اکبر ایس بابر کے وکیل احمد حسن نے سماعت میں اپنے دلائل دیتے ہوئے موقف اختیار کیا کہ ظاہر نہ کردہ اکاؤنٹس سے رقم پی ٹی آئی کے ظاہر کردہ اکاؤنٹس میں آئی ہے، پی ٹی آئی حساب نہ دے سکی تو تمام رقم ضبط ہونی چاہیے، کوئی پاکستانی بھی اپنی غیرملکی کمپنی سے فنڈنگ نہیں کرسکتا۔

احمد حسن ایڈوکیٹ نے کہا کہ پی ٹی آئی کو349 غیرملکی کمپنیوں سے فنڈنگ ہوئی،اسکروٹنی کمیٹی نے کئی افراد کو بظاہر پاکستانی قرار دیا ہے، بظاہر پاکستانی کی سمجھ نہیں آئی، کوئی پاکستانی ہے یا نہیں، واضح نہیں کیا گیا،پی ٹی آئی کو25 کروڑ روپے کیش کس نے دیئے کچھ معلوم نہیں۔

وکیل احمد حسن نے کہا کہ پی ٹی آئی کے مطابق انہیں ملک کے اندرسے 16 لاکھ ڈالر فنڈز ملے، چیف الیکشن کمیشن نے کہا کہ اب تو شادیوں میں بھی روپے کی جگہ ڈالر پھینکے جاتے ہیں جواب میں وکیل احمد حسن نے کہا کہ کسی ایسی شادی کا علم ہو تو ضرور بتائیے گا، میں بھی جانا چاہتا ہوں۔

اکبر ایس بابر کے وکیل نے کہا کہ بیرون ملک سے پیسے بھیجنے والوں کے نام تک نہیں بتائے گئے، سعودی عرب اور یو اے ای میں تو سیاست ہو ہی نہیں سکتی، عرب ممالک سے سیاسی پیسہ بینک کے ذریعے نہیں آسکتا،تمام رقم بینکوں سے آئی اور پارٹی اکاونٹس میں گئی۔

چیف الیکشن کمشنر کا کہنا تھا کہ آسٹریلیا، ناروے یا کسی اور ملک سے لوگ پیسے بھیجتے ہیں تو کیا مسئلہ ہے؟ پارٹی پیسہ جمع کرکے پاکستان بھیجے تو اس میں کیا غلط ہے؟وکیل اکبر ایس بابر نے کہا کہ فنڈ دینے والوں کی تفصیل بھی ہونی چاہیے، سیاسی جماعت آمدن کے ذرائع بتانے کی پابند ہے۔

وکیل اکبرایس بابر کا کہنا تھا کہ کمپنیوں سے آنے والی تمام رقم ممنوعہ ہے ضبط کی جائے، وکیل پی ٹی آئی نے کہا کہ امریکا میں ایل ایل سی کمپنی بنائے بغیر فنڈ ریزنگ نہیں ہوسکتی۔

اکبرایس بابر کے وکیل نے بتایا کہ پی ٹی آئی نے ایک اکاؤنٹ کو تسلیم نہیں کیا، وہ اسد قیصر چلاتے ہیں، روہتا شیٹھی نامی بھارتی خاتون نے سنگاپور سے فنڈنگ کی، غیر ملکی فنڈز اگر شوکت خاتم کو ملتے تو کوئی اعتراض نہیں تھا، الیکشن کمیشن کو عمران خان نے سرٹیفکیٹ دیا کہ ممنوعہ فنڈنگ نہیں لی، ممنوعہ فنڈنگ ضبط اور سرٹیفکیٹ دینے والا نااہل ہوگا۔

قومی خبریں سے مزید

Original Article

Leave a Reply

Your email address will not be published.