Categories
Breaking news

شاہ لطیف ٹاؤن آپریشن: گرفتار دہشتگرد ’را‘ کے لیے کام کر رہے تھے

Advertisement
شاہ لطیف ٹاؤن آپریشن: گرفتار دہشتگرد ’را‘ کے لیے کام کر رہے تھے

شاہ لطیف ٹاؤن میں حساس اداروں اور سی ٹی ڈی کے مشترکہ آپریشن میں گرفتار غیر ملکی دہشتگردوں میں سے تین کا تعلق افغان انٹیلی جنس اور قانون نافذ کرنےو الے اداروں سے ہے اور حکام بتاتے ہیں کہ بظاہر ایسا لگتا کہ یہ دہشتگرد افغان فورسز چھوڑ کر بھارتی ایجنسی ’را‘ کے لیے کام کر رہے تھے۔

کراچی کے مضافاتی علاقے شاہ لطیف ٹاون میں حساس ادارے اور سی ٹی ڈی کے مشترکہ آپریشن کی مزید اہم معلومات جیونیوز نے حاصل کرلی ہیں۔

Table of Contents

x
Advertisement

حکام بتاتے ہیں کہ دہشتگردوں میں افغان حساس ادارے اور سیکیورٹی ادارے کے سابق اہلکار شامل ہیں، ایک دہشتگرد افغان حساس ادارےکا اعلی افسر جبکہ دو سیکیورٹی فورسز کے سابق اہلکار ہیں اور ایسا لگتا ہے کہ ان کو انٹیلی جنس اور آپریشن کا خاص تجربہ ہونے کے باعث دہشتگرد گروہ میں بھرتی کیا گیا تھا۔

کراچی میں گرفتار دہشتگردوں کے تانے بانے افغانستان سے ملتے ہیں، ناصر حسین شاہ

صوبائی وزیر نے کہا کہ سی ٹی ڈی کی کارروائی میں ایک خودکش بمبار بھی مارا گیا۔

حکام نے مزید بتایا کہ یہ تمام دہشتگرد بظاہر افغان فورسز چھوڑ کر بھارتی خفیہ ایجنسی را کےلیے کام کررہے تھے، سندھ اسمبلی کے علاوہ ایک اور حساس عمارت پر دوبارہ حملےکی منصوبہ بندی کی گئی جبکہ کچھ خاص شخصیات اور تنصیبات کو بھی نشانہ بنائے جانے کا ٹاسک انھیں دیا گیا تھا۔

حکام نے کہا کہ کوشش کی جارہی ہے کہ تمام گرفتار دہشتگرد عدالت کے روبرو اقبال جرم کریں کیونکہ ان کے خلاف ٹھوس شواہد موجود ہیں۔

حکام نے مزید بتایا کہ اس گروہ کی دہشتگردی کی کچھ وارداتوں کی اطلاعات ملی ہیں تاہم ان کی تصدیق کی جارہی ہے، ان دہشتگردوں سے مزید تحقیقات کے لیے مشترکہ تحقیقاتی ٹیم کے لیے خط لکھ دیا گیا۔

خط ڈی آئی جی سی ٹی ڈی کی جانب سے لکھا گیا ہے اور استدعا کی گئی ہے کہ جلد جے آئی ٹی قائم کردی جائے۔

​​

قومی خبریں سے مزید

Original Article

Advertisement

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *