Categories
Breaking news

سعودی عرب میں سات ہزار سال پرانی جانوروں کی شکار گاہیں دریافت

Advertisement
Advertisement

جانوروں کی شکار گاہیں دریافتسعودی عرب میں سائنسدانوں کی ایک ٹیم نے صحرا نفود میں پتھروں سے تیار کی گئی تنصیبات کے ڈھانچوں کا پتا چلایا ہے، جن کے بارے میں خیال کیا جاتا ہے کہ انہیں جانوروں کے شکار کے لیے شکارگاہ کے طورپر استعمال کیا جاتا رہا ہے۔ یہ شکار گاہیں 7000 سال پرانی بتائی جاتی ہیں۔

میڈیارپورٹس کے مطابق سعودی ثقافتی ورثہ اتھارٹی نے بتایا کہماہرین نے آثار قدیمہ کی ٹیم کے کام کے نتائج نے اس بات کی تصدیق کی کہ مملکت کے شمالی علاقوں میں تقریبا 5000 سال پہلے لوگ ایک مخصوص ثقافت کے تحت زندگی بسر کرتے تھے۔

انہوں نے اپنے قیام کے لیے جھونپڑیوں کے ساتھ ساتھ جانوروں کے باڑے اور ان کی شکار گاہیں بھی تیار کی جاتی تھیں۔ جو اس دور کے تہذیب وتمدن کی واضح مثال ہے۔

انہوں نے نشاندہی کی کہ یہ سائنسی پیش رفت جس کے نتائج پر مبنی مطالعہ بین الاقوامی ہولوسن جرنل آف سائنس نے شائع کیا ہے ، یہ جرمنی کے میکس پلانک انسٹیٹیوٹ ، آکسفورڈ یونیورسٹی ، اور کنگ سعود یونیورسٹی کی شرکت سے ہیریٹیج اتھارٹی کے زیر قیادت گرین عرب جزیرہ نما پروجیکٹ کے فیلڈ ورک کا حصہ ہے۔

سائنسی فیلڈ کام نے آثار قدیمہ اور ماحولیاتی سیاق و سباق میں پتھروں کی تنصیبات کی ترقی کے آغاز کا پتا چلایا۔

خاص طور پر یہاں پر مستطیل شکل کی تنصیبات کو جانوروں کے جال کے طور پر بیان کیا گیا ، کیونکہ ان مستطیلوں نے اسی طرح کا کردار ادا کیا اور چراگاہوں کے مقابلے کے ذریعہ انسانوں میں علاقائی طرز عمل کی نشوونما کو ظاہر کیا۔ جزیرہ نما عرب کے مشکل اور غیر مستحکم ماحول میں حتی کہ ہولوسین دور کے مرطوب وقت میں جب یہ ماحول خشک سالی سے گزر رہا تھا۔

یہ تنصیبات جزیرہ نما صحرا نفود کے جنوبی مضافات میں موجود ہیں۔ حالیہ دہائیوں میں خطے اور اس کے قدیم ماحول کا مطالعہ کرنے کے لیے شمال کے صحرائے جبل اجا کی مغربی سرحد سے مغرب میں تیما تک اور جنوب میں صحرا نفود تک ہزاروں سال پرانی تہذیبوں کی باقیات اور ان کے آثار ملتے ہیں۔

اس دوران پتھروں کی 104 تنصیبات کی صحرانفود کی جنوبی حدود کے آس پاس کی نشاندہی کی گئی ہے۔ جن کی تعداد اس بات کی نشاندہی کرتی ہے کہ وہ حرہ خیبر سے بہت دور تک پھیلے ہوئے ہیں۔ توقع کی جاتی ہے کہ مستطیل نما شکار گاہوں کی باقیات مشرق کی سمت میں بھی ہو سکتی ہیں۔

Advertisement

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *