Categories
Breaking news

جماعتِ اسلامی کا سندھ اسمبلی پر دھرنا آج بھی جاری

امیرِ جماعتِ اسلامی کراچی حافظ نعیم الرحمٰن سندھ اسمبلی پر دھرنے کے شرکاء سے خطاب کر رہے ہیں— بشکریہ فیس بک
امیرِ جماعتِ اسلامی کراچی حافظ نعیم الرحمٰن سندھ اسمبلی پر دھرنے کے شرکاء سے خطاب کر رہے ہیں— بشکریہ فیس بک

جماعتِ اسلامی کی جانب سے گزشتہ روز کراچی میں سندھ اسمبلی کے باہر نئے بلدیاتی نظام کے خلاف دیا جانے والا دھرنا آج بھی جاری ہے۔

جماعتِ اسلامی کا احتجاجی کیمپ سندھ اسمبلی کے گیٹ کے سامنے مین روڈ پر لگا ہوا ہے جس میں شرکاء موجود ہیں۔

امیرِ جماعتِ اسلامی کراچی حافظ نعیم الرحمٰن نے رات گئے دھرنے کے شرکاء سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ سندھ اسمبلی میں اپوزیشن جماعتوں نے بھی کراچی کے لیے کچھ نہیں کیا۔

براہ راست میئر کا انتخاب اور بااختیار شہری حکومت قائم کی جائے، سندھ اسمبلی کے سامنے جماعت اسلامی کا دھرنا

کراچی امیر جماعت اسلامی کراچی حافظ نعیم الرحمٰن…

ان کا کہنا تھا کہ ہماری تحریک سندھ کے ہر شہری کے حق کے لیے ہے، نئے بلدیاتی قانون میں سندھ کے ہر شہر کا میئر بے اختیار کر دیا گیا ہے۔

حافظ نعیم الرحمٰن نے کہا کہ دھرنا عوامی حقوق کے لیے ہے، سندھ حکومت نے تمام ادارے تباہ کر دیئے، اپوزیشن کو ڈرائنگ روم کی سیاست سے باہر نکلنا ہوگا۔

امیرِ جماعتِ اسلامی کراچی کا یہ بھی کہنا تھا کہ ایم کیو ایم کے دور میں کراچی میں ٹرانسپورٹ کا نظام ختم ہوا۔

جماعت اسلامی کا بلدیاتی قانون کیخلاف سندھ اسمبلی کے باہر دھرنا

جماعت اسلامی کراچی نےسندھ حکومت کے بلدیاتی قانون کے خلاف صوبائی اسمبلی کے باہر دھرنا دے دیا۔

جماعتِ اسلامی بلوچستان کے جنرل سیکریٹری اور ’حق دو گوادر و بلوچستان کو تحریک‘ کے روحِ رواں مولانا ہدایت الرحمٰن نے بھی دھرنے سے خطاب کیا۔

ان کا کہنا تھا کہ وڈیرے اور جاگیر دار اختیارات نچلی سطح پر منتقل نہیں کرنا چاہتے۔

مولانا ہدایت الرحمٰن نے کہا کہ ہم نے گوادر میں 32 دن دھرنا دیا، سوائے چیک پوسٹوں کے بلوچوں کو کچھ نہیں دیا گیا۔

قومی خبریں سے مزید

Original Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *