Categories
Breaking news

جلسے و دھرنے کیلئے PTI انتظامیہ سے اجازت لے: اسلام آباد ہائی کورٹ

—فائل فوٹو
—فائل فوٹو

اسلام آباد ہائی کورٹ میں پی ٹی آئی کی جلسے اور دھرنے کے لیے این او سی کے اجراء کی درخواست پر سماعت کے دوران انٹیلی جنس رپورٹ پیش کی گئی جس میں کہا گیا ہے کہ عمران خان پر جلسے کے دوران پھر حملے کا خدشہ ہے۔

عدالت نے حکم دیا کہ تحریکِ انصاف جلسے و دھرنے کے لیے انتظامیہ سے اجازت لے۔

عدالتِ عالیہ میں مقامی تاجروں کی پی ٹی آئی دھرنے کے باعث راستوں کی بندش کے خلاف درخواست پر بھی سماعت ہوئی۔

اسلام آباد ہائی کورٹ کے چیف جسٹس عامر فاروق نے پی ٹی آئی کے علی نواز اعوان اور مقامی تاجروں کی درخواستوں کو یکجا کر کے سماعت کی۔

وکیل نے عدالت کو بتایا کہ علی نواز اعوان اس کیس میں پٹیشنر ہیں جو شہر سے باہر ہونے کی وجہ سے آج دستیاب نہیں۔

چیف جسٹس نے سوال کیا کہ پاکستان تحریکِ انصاف شہر سے باہر ہے؟ عدالت نے صرف یہ ہی کہنا ہے کہ جو کچھ کرنا ہے وہ قانون کے مطابق کریں۔

ایڈووکیٹ جنرل اسلام آباد نے جواب دیا کہ پی ٹی آئی والوں کا تو پتہ ہی نہیں ہے کہ انہوں نے کب آنا ہے؟

ایڈیشنل اٹارنی جنرل نے کہا کہ ان کی درخواست 3 نومبر کی تھی جو پہلے ہی غیر مؤثر ہو چکی ہے۔

’’پی ٹی آئی انتظامیہ سے اجازت لے‘‘

عدالت نے حکم دیا کہ پی ٹی آئی جلسے کی تاریخ اور وقت سے آگاہ کر کے انتظامیہ سے اجازت لے۔

چیف جسٹس اسلام آباد ہائی کورٹ عامر فاروق نے کہا کہ یہ سب ایڈمنسٹریشن نے ہی فیصلہ کرنا ہے، ہم نے صرف یہ ڈائریکشن دینی ہے کہ آپ ان کی درخواست پر قانون کے مطابق فیصلہ کریں۔

معاون وکیل نے کہا کہ ہم انتظامیہ کو آج ہی درخواست دے دیتے ہیں، اس کیس میں بابر اعوان خود پیش ہوں گے، منگل تک سماعت ملتوی کر دیں۔

چیف جسٹس نے انہیں ہدایت کی کہ آپ نے انتظامیہ کو نئی درخواست دینی ہے، اگر مسئلہ حل نہ ہو تو نئی پٹیشن بھی دائر کر سکتے ہیں، عدالت کوئی مقام تجویز نہیں کر سکتی، یہ انتظامیہ کا کام ہے کہ وہ بتائے کہ ڈی چوک میں اجازت دینی ہے یا ایف نائن پارک میں، جلسے کے لیے قواعد و ضوابط اور شرائط انتظامیہ کے ساتھ ہی طے ہونی ہیں، سپریم کورٹ سے بھی اس سے متعلق آرڈر آ چکا ہے۔

چیف جسٹس اسلام آباد ہائی کورٹ عامر فاروق نے سوال کیا کہ تاجروں کی درخواست پر کیا کریں؟ ابھی راستے بند تو نہیں کیے گئے؟ اگر کوئی صوبہ فیڈریشن کی ڈائریکشن نہیں مانتا تو پھر کیا ہو گا؟ فیڈریشن امن و امان کی صورتِ حال کو کنٹرول کرنے کے لیے کیا کر سکتی ہے؟

ایڈووکیٹ جنرل جہانگیر جدون نے جواب دیا کہ وفاق آئین کے تحت آرمڈ فورسز کو طلب کر سکتا ہے۔

چیف جسٹس نے کہا کہ لاہور ہائی کورٹ میں بھی یہ معاملہ آیا تھا اور کچھ ڈائریکشنز دی گئی ہیں، اگر انہوں نے کہہ دیا کہ راستے بند نہیں ہوں گے تو ٹھیک ہے۔

انٹیلی جنس رپورٹ عدالت میں پیش

دورانِ سماعت انٹیلی جنس رپورٹ عدالت میں پیش کی گئی جس میں کہا گیا ہے کہ عمران خان پر جلسے کے دوران حملے کا خدشہ ہے۔

چیف جسٹس اسلام آباد ہائی کورٹ عامرفاروق نے کہا کہ انٹیلی جنس رپورٹس کے مطابق عمران خان پر حملے کے خدشات ہیں، حکومت اور ریاست کی ذمے داری ہے کہ وہ اس چیز کو بھی مدِ نظر رکھے، سیاسی اور غیر سیاسی جماعتوں کا احتجاج کرنا حق ہے، عام شہریوں اور پٹیشنرز تاجروں کے بھی حقوق ہیں جو متاثر نہیں ہونے چاہئیں، انگلینڈ میں بھی مظاہرین ٹین ڈاؤننگ اسٹریٹ پر آ جاتے ہیں، احتجاج کرتے ہیں مگر سڑک بلاک نہیں کرتے، ہائی کورٹ ڈپٹی کمشنر کی ذمے داریاں نہیں سنبھال سکتی، اگر آپ ڈپٹی کمشنر کے کسی آرڈر سے متاثر ہوئے تو عدالت آئیں۔

ایڈووکیٹ جنرل اسلام آباد نے کہا کہ سپریم کورٹ نے کہا ہے کہ لانگ مارچ نہیں روک سکتے۔

چیف جسٹس نے پی ٹی آئی کے وکیل سے کہا کہ آپ نے جی ٹی روڈ، موٹر وے اور دیگر شاہراہیں بلاک کیں، آپ کو بھی ذمے داری کا مظاہرہ کرنا چاہیے۔

پی ٹی آئی وکیل نے جواب دیا کہ نئی درخواست کے لیے پارٹی قیادت سے مشاورت کرنی ہے۔

’’احتجاج کا حق اور شہریوں کے حقوق متاثر نہ ہوں‘‘

چیف جسٹس عامر فاروق نے کہا کہ پی ٹی آئی نے اگر جلسہ کرنا ہے تو انتظامیہ کو نئی درخواست دے، اگر جلسے کی اجازت دیں گے تو یقینی بنائیں گے کہ سڑکیں بلاک نہ ہوں، انتظامیہ نے یقینی بنانا ہے کہ عوام کے حقوق متاثر نہ ہوں، سیاسی جماعت کے احتجاج کا حق اور شہریوں کے بنیادی حقوق دونوں ہی متاثر نہ ہوں، انتظامیہ نے بیلنس قائم کرنا ہے۔

پٹیشنر کے وکیل سردار تیمور اسلم نے عدالت کو بتایا کہ اسلام آباد کے راستوں میں اب بھی کنٹینرز کھڑے ہیں۔

ایڈووکیٹ جنرل نے کہا کہ کنٹینرز احتیاطی تدابیر کے لیے رکھے ہیں، ان سے راستے بلاک نہیں ہوئے۔

’’2014ء کے دھرنے کے کنٹینرز کے پیسے 3 ہفتے پہلے ادا ہوئے‘‘

چیف جسٹس عامر فاروق نے کہا کہ 2014ء کے دھرنے کے دوران پکڑے گئے کنٹینرز کے پیسے 3 ہفتے پہلے ادا ہوئے ہیں، وہ بھی جب توہینِ عدالت کی درخواست آئی تو پھر پیسوں کی ادائیگی ہوئی۔

عدالتِ عالیہ نے پی ٹی آئی کو جلسے کے این او سی کے لیے انتظامیہ کو نئی درخواست دینے کی ہدایت کرتے ہوئے پی ٹی آئی کے وکیل کی استدعا پر سماعت 22 نومبر تک ملتوی کر دی۔

قومی خبریں سے مزید

Original Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *