Categories
Breaking news

بلوچستان کا مالی بحران شدت اختیار کرنے لگا

فائل فوٹو
فائل فوٹو

بلوچستان کو رواں مالی سال کے دوران وفاق کی جانب سے این ایف سی ایوارڈ کے تحت ملنے والی رقم میں 30 ارب روپے کم ملنے کے باعث صوبے کا مالی بحران شدت اختیار کر رہا ہے، وفاقی حکومت کی جانب سے صوبے کے محصولات بہتر نہ کئے گئے تو صوبائی حکومت ملازمین کو تنخواہیں بھی ادا نہیں کر سکے گی۔

سرکاری ذرائع کے مطابق بلوچستان کو رواں مالی سال کے ابتدائی پانچ ماہ یعنی نومبر 2022 تک وفاق کی جانب سے 131 ارب روپے ملنے تھے تاہم صوبے کو اب تک صرف 101 ارب روپے ملے ہیں اور مجموعی طور پر 5 ماہ کے دوران صوبے کو 30 ارب روپے کم ملے ہیں جس کی وجہ سے بلوچستان حکومت مالی بحران کا شکار ہے۔

ذرائع نے یہ بھی بتایا کہ بلوچستان کو گزشتہ مالی سال 2021-22 کے دوران این ایف سی ایوارڈ کے تحت ملنے والی رقم سے 11ارب روپے کم ملے تھے۔

ذرائع نے بتایا ہے کہ این ایف سی ایوارڈ کے تحت بلوچستان کے 9.09 فیصد حصے کو آئینی تحفظ حاصل ہے اور یہ حصہ کسی بھی صورت کم نہیں کیا جاسکتا ہے۔

ذرائع نے بتایا کہ اگر بلوچستان حکومت کو وفاق سے این ایف سی ایوارڈ کے تحت ملنے والی رقم کم ملنے کا سلسلہ جاری رہا تو صوبہ مزید مالی بحران کا شکار ہوسکتا ہے اور ملازمین کو تنخواہوں کی ادائیگی بھی رک سکتی ہیں۔

قومی خبریں سے مزید

Original Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *