Categories
Breaking news

این اے 249: بائیکاٹ کے باوجود ووٹوں کی گنتی جاری

کراچی میں قومی اسمبلی کے حقلہ این اے 249 میں سیاسی جماعتوں کے بائیکاٹ کے باوجود الیکشن کمیشن کے عملے کی جانب سے ضمنی انتخاب کے ووٹوں کی گنتی جاری ہے۔

اس نشست پر پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی) کے عبدالقادر مندوخیل نے کامیابی حاصل کی تھی، جبکہ ان کے مقابل پاکستان مسلم لیگ (ن) کے امیدوار مفتح اسماعیل کو شکست کا سامنا کرنا پڑا تھا۔

پیپلز پارٹی کے امیدوار عبدالقادر مندوخیل اور ٹی ایل پی سمیت 2 آزاد امیدوار بھی ووٹوں کی دوبارہ گنتی کے عمل میں موجود ہیں۔

ذرائع کے مطابق ووٹوں کی دوبارہ گنتی کے دوران 19 پولنگ اسٹیشنز کے ووٹوں کی گنتی مکمل کرلی گئی۔

ذرائع نے بتایا کہ ان 19 پولنگ اسٹیشنوں کے ووٹوں کی گنتی کے دوران پیپلز پارٹی کے امیدوار قادر خان مندوخیل کے 21 ووٹ مسترد ہوچکے ہیں۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ مسلم لیگ نون کے امیدوار مفتاح اسماعیل کے 11 ووٹ جبکہ تحریکِ انصاف کے امیدوار امجد آفریدی کے 23 ووٹ مسترد ہوئے۔

ذرائع نے یہ بھی بتایا ہے کہ دوبارہ گنتی کے دوران اب تک مجموعی طور پر 55 ووٹ مسترد ہوئے ہیں جبکہ گنتی کا عمل بلا تعطل جاری ہے۔

Table of Contents

الیکشن کمیشن کا بائیکاٹ کرنے والی جماعتوں کو نوٹس

الیکشن کمیشن نے قومی اسمبلی کے حلقے این اے 249 کے ضمنی انتخاب کے ووٹوں کی دوبارہ گنتی کا بائیکاٹ کرنے والی سیاسی جماعتوں کو نوٹس جاری کر دیا۔

الیکشن کمیشن آف پاکستان کی جانب سے ووٹوں کی دوبارہ گنتی کا بائیکاٹ کرنے والی سیاسی جماعتوں سے ووٹوں کے گنتی کے عمل میں شامل ہونے کی درخواست کی گئی ہے۔

سیاسی جماعتوں کی جانب سے ووٹوں کی دوبارہ گنتی کے بائیکاٹ پر الیکشن کمیشن کا کہنا ہے کہ سیاسی جماعتوں کے بائیکاٹ کے باوجود گنتی کی جائے گی۔

الیکشن کمیشن آف پاکستان کے حکام کا کہنا ہے کہ الیکشن کمیشن صرف درست اور مسترد ووٹوں کی گنتی کرنے کا پابند ہے، وہ ووٹوں کی گنتی کرے گا۔

الیکشن کمیشن کے حکام کا کہنا ہے کہ فیصلے کے مطابق ڈالے گئے اور مسترد شدہ ووٹ گننے کا حکم دیا گیا تھا۔

الیکشن کمیشن آف پاکستان کے حکام کا مزید کہنا ہے کہ بائیکاٹ کے باوجود جاری فیصلے کے مطابق دوبارہ گنتی کا عمل مکمل کیا جائے گا۔

الیکشن کمیشن کے حکام نے یہ بھی کہا ہے کہ امیدواروں کی جانب سے ڈالے گئے تمام ووٹوں کا ڈیٹا دینے کا مطالبہ کیا گیا ہے، تاہم امیدواروں کو کسی بھی قسم کا انتخابی ڈیٹا فراہم کرنا ممکن نہیں۔

کس نے بائیکاٹ کیا، کس نے نہیں؟

اس سے قبل کراچی کے قومی اسمبلی کے حلقے این اے 249 میں ہونے والے ضمنی انتخاب کے سلسلے میں ووٹوں کی دوبارہ گنتی شروع ہو نے جا رہی تھی اور تمام جماعتوں کے امیدوار ڈی آر او آفس میں موجود تھے کہ ووٹوں کے بیگز پر سیل نہ ہونے کے باعث پاکستان پیپلز پارٹی کے سوا دیگر تمام جماعتوں نے ووٹوں کی دوبارہ گنتی کا بائیکاٹ کر دیا۔

سیاسی جماعتوں کے بائیکاٹ کیئے جانے کے باعث ڈی آر او دفتر اور اس کے باہر کافی شور شرابہ ہوا ہے۔

دوبارہ گنتی کا بائیکاٹ کرنے والوں کے 2 ابتدائی اعتراضات سامنے آئے ہیں، پہلا اعتراض یہ ہے کہ پولنگ بیگ پر سیل نہیں ہے، دوسرا اعتراض ہے کہ فارم 46 مہیا نہیں کیا گیا۔

اس ضمن میں بائیکاٹ کرنے والے مسلم لیگ نون، ایم کیو ایم پاکستان، پی ایس پی، پاسبان اور آزاد امیدواروں نے تحریری درخواست آر او کے پاس جمع کروا دی۔

درخواست میں کہا گیا ہے کہ ہمیں فارم 46 نہیں دیئے گئے، بیلٹ بک کی کاؤنٹر فائل بھی موجود نہیں، پولنگ بیگ پر سیل بھی موجود نہیں، لہٰذا ہم ووٹوں کی دوبارہ گنتی کے عمل کا حصہ نہیں بن سکتے۔

دوبارہ گنتی کیلئے کون کون پہنچا؟

اس سے پہلے قومی اسمبلی کے حلقہ این اے 249 کراچی میں ہونے والے ضمنی انتخاب میں مسلم لیگ نون کے امیدوار مفتاح اسماعیل، پاکستان پیپلز پارٹی کے امیدوار عبدالقادر مندوخیل، پی ٹی آئی کے امیدوار امجد آفریدی، پی ایس پی کے امیدوار حفیظ الدین ، پاکستان مسلم الائنس کے رہنما حضرت عمر اور 6 آزاد امیدواروں سمیت کل 16 امیدوار ووٹوں کی دوبارہ گنتی کے سلسلے میں آر او آفس پہنچے تھے۔

مفتاح اسماعیل کی درخواست پر دوبارہ گنتی

29 اپریل کو ہونے والے انتخاب میں پیپلز پارٹی نے کامیابی حاصل کی تھی جبکہ مسلم لیگ نون دوسرے نمبر پر آئی تھی۔

مسلم لیگ نون کے رہنما مفتاح اسماعیل نے نتیجے کو مسترد کر کے دھاندلی کا الزام لگایا تھا اور الیکشن کمیشن سے ووٹوں کی دوبارہ گنتی کرانے کی درخواست کی تھی۔

تحریک انصاف نے دوبارہ گنتی کے بجائے دوبارہ پولنگ کا مطالبہ کیا تھا، الیکشن کمیشن نے نون لیگ کی درخواست مان لی تھی۔

قومی خبریں سے مزید

Original Article

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *