Categories
Breaking news

امریکی انتخابات میں دھاندلی کا الزام، ٹرمپ نے سائیبر سکیورٹی کے ڈائریکٹر کو عہدے سے برطرف کردیا

Advertisement

ٹرمپ

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے گزشتہ صدارتی انتخابات کو شفاف قرار دینے کی پاداش میں ڈائریکٹر سی آئی ایس اے کرسٹوفر کربس کو عہدے سے برطرف کردیا۔

Advertisement

کرس کریبس نے گزشتہ ہفتے سرکاری اور نجی انتخابی افسران سے گفتگو میں کہا تھا کہ اس بات کا کوئی ثبوت نہیں ہے کہ ووٹنگ کے دوران کسی بھی طرح ووٹ کو ضائع یا تبدیل کیا گیا ہے یا کسی بھی طرح سے دھاندلی کی گئی ہے۔

امریکی صدر ڈونالڈ ٹرمپ سائیبر سکیورٹی اینڈ انفراسٹرکچر سکیورٹی ایجنسی (سی آئی ایس اے) کے ڈائریکٹر کرس کریبس کی اس بات سے سخت ناراض ہوئے اور انہیں عہدے سے معزول کردیا۔

سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر ڈونلڈ ٹرمپ نے مذکورہ عہدیدار کے بیان کو جھوٹ قرار دیتے ہوئے کہا کہ صدارتی الیکشن کی سیکیورٹی کے سلسلے میں دیا گیا کرس کریبس کا حالیہ بیان بے حد غلط ہے۔

امریکی صدر نے کہا کہ الیکشن کے دوران مردہ افراد کی جانب سے ووٹ کرنا، پول واچرس کو پولنگ بوتھ میں جانے کی اجازت نہ دینا، ووٹنگ مشینوں میں گڑبڑ جن کے ذریعے ٹرمپ ٹو بائیڈن کی شکل میں ووٹوں کو تبدیل کیا گیا۔

اس کے علاوہ لیٹ ووٹنگ اور کئی طرح کی دھاندلی کی گئی تھی، لہٰذا فوری طور پر کریس کریبس کی سی آئی ایس اے ڈائریکٹر کی سروس ختم کر دی گئی ہے۔

صدارتی الیکشن کو امریکی تاریخ کے شفاف ترین انتخابات قرار دینے والے افسر کرسٹوفر کربز کا معطلی کے بعد امریکی ٹی وی سے بات کرتے ہوئے کہنا تھا کہ مجھے فخر ہے کہ میں نے اور میری ٹیم نے سی آئی اے ایس کے لیے کام کیا، ہم نے بہترین کام کیا۔

The recent statement by Chris Krebs on the security of the 2020 Election was highly inaccurate, in that there were massive improprieties and fraud – including dead people voting, Poll Watchers not allowed into polling locations, “glitches” in the voting machines which changed…

— Donald J. Trump (@realDonaldTrump) November 18, 2020

Advertisement

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *