Categories
Breaking news

اسپین: موجودہ صحت قوانین کے تحت عام کرفیو کا نفاذ نہیں ہو سکتا، ہسپانوی سپریم کورٹ

میڈرڈ (محمد نبی) جمعرات کے روز ہسپانوی سپریم کورٹ نے فیصلہ دیا ہے کہ کرفیو کا عام استعمال اور لوگوں کے اکھٹے ہونے پر پابندی ملک کے موجودہ صحت قانون کے تحت ممکن نہیں۔ اس فیصلے کا سب سے زیادہ اثر اسپین کے ان خطوں پر ہوگا جو اپنے تئیں کورونا وبا کو قابو میں رکھنے کے لئے اقدامات کر رہے ہیں۔
جب 9 مئی کو اسٹیٹ آف الارم ختم کیا گیا تو علاقائی حکام کے پاس کورونا پابندیوں کے حوالے سے کوئی قانونی فریم ورک موجود نہیں تھا۔ علاقائی حکومتیں وہ پابندیاں نافذ نہیں کر سکتی تھیں جن سے بنیادی حقوق کے پامال ہونے کا خدشہ موجود تھا۔ ان سخت پابندیوں میں کرفیو کا نفاذ اور عوامی اجتماعات پر پابندی شامل تھیں۔

اس لئے علاقائی حکومتوں نے عدالتوں سے پبلک ہیلتھ لا 1986 کا حوالہ دے کر پابندیاں نافذ کرنے کی درخواست کی تھی۔ تاہم عدالتوں نے اس قانون کو یکسر مختلف انداز میں دیکھا۔ مثلا کاتالونیا میں ایک ماتحت عدالت نے 10 افراد کے اجتماع کی حد مقرر کی تو اسی دن ایک دوسری ٹرائبونل نے اس کو منسوخ کر دیا۔ حالیہ عدالت عظمٰی کے فیصلے نے معاملے کو قدرے واضح لیکن سخت کر دیا ہے۔ جو علاقائی حکومتوں کے لئے پریشانی کا باعث بن سکتا ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *