Categories
Breaking news

اسٹیبلشمنٹ سے میں نے کوئی راستہ نکالنے کا نہیں کہا، وزیراعظم عمران خان

اسٹیبلشمنٹ سے میں نے کوئی راستہ نکالنے کا نہیں کہا، وزیراعظم عمران خان

وزیر اعظم عمران خان کا کہنا ہے کہ اسٹیبلشمنٹ سے میں نے کوئی راستہ نکالنے کا نہیں کہا، جماعت میں سے کسی نے کہا ہو تو میں نہیں جانتا، جس کو خوف ہوگا وہ کہے گا میرے لیے یہ کردو وہ کردو، مجھے کوئی خوف نہیں ہے۔

نجی ٹی وی کو انٹرویو دیتے ہوئے وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ پاکستان میں آج صرف ایک وفاقی جماعت رہ گئی جو تمام صوبوں میں ووٹ لیتی ہے، میں آپ کو اندرون سندھ ووٹ لے کر دکھاؤں گا۔

وزیراعظم نے کہا کہ ایک جھوٹا کرپٹ آدمی 35 سال سے ملک کو لوٹ رہا ہے، جنرل مشرف کے ساتھ رو دھوکر معاہدے کرکے باہر گیا، واپس تب آیا جب بے نظیر اور مشرف نے مل کر این آر او دلایا، ادھر یہ بچ گیا اور ادھر زرداری بچ گیا۔

مجھے ہٹاکر امریکی حمایت یافتہ حکومت لانے کی کوشش ہورہی ہے، عمران خان

عمران خان نے کہا کہ عدم اعتماد ووٹنگ کے نتائج کیسے مان سکتا ہوں جب پورا عمل ہی غیر معتبر ہو، جمہوریت اخلاقی بالا دستی پر کام کرتی ہے۔

عمران خان نے کہا کہ جیل میرے لیے کوئی چیز نہیں جو موت سے نہیں ڈرتا کسی چیز سے نہیں ڈرتا، نواز شریف کو باہر بھیجنا میرے اکیلیے کا فیصلہ نہیں تھا، چھ گھنٹے کابینہ کی میٹنگ ہوئی اس کی تمام میڈیکل رپورٹس دکھائی گئیں۔

وزیر اعظم نے کہا کہ افسوس سے کہنا پڑتا ہے ہمیں بہت بڑا دھوکا دیا کس نے دیا نہیں جانتا، جو رپورٹس دکھائی گئیں لگا کہ یہ تو ایئرپورٹ ہی نہیں پہنچ پائے گا، کہہ نہیں سکتا کس نے دھوکا دیا بینیفٹ آف ڈاؤٹ دیتا ہوں۔

انہوں نے کہا کہ آئندہ صرف ملک کا نظریہ اور جذبہ رکھنے والوں کو ٹکٹ دوں گا، ٹکٹ میں نے نہیں دیے، وقت کم تھا میں مہم چلا رہا تھا، اتنی توجہ نہیں دی، کسی کو الزام نہیں دیتا، میں جانتا ہوں کہ میں نے کہاں غلطی کی۔

آپ کا کپتان نہیں پتہ کہ کل کیا کر دے، وزیراعظم عمران خان

عمران خان نے کہا کہ جو ان لوگوں نے امریکا کے ساتھ ملکر کیا ہے ایسا کبھی نہیں ہوا اس ملک میں، چوروں اور امریکا کی سازش کے خلاف عوام کھڑے ہوں۔

وزیر اعظم نے کہا کہ سیاسی اشرافیہ کو میں نہیں جانتا میں تو آؤٹ سائیڈر تھا، نا، جو لوگ میرے ساتھ مشکل میں کھڑے رہے سب وہ ہیں جن کے پاس نظریہ تھا، جو یہ فصلی بٹیرے آئے تھے ادھر ادھر سے انھوں نے بڑا تنگ کیا۔

اس سوال کے جواب میں اگر آپ وزیراعظم رہے تو سازش کرنے والوں کے خلاف کارروائی کریں گے، عمران خان نے کہا کہ وزیراعظم رہے کیا؟ میں اب بھی وزیراعظم ہوں اب بھی کیس کرسکتا ہوں، یہ اچکن نہیں پہنے گا پہلے بتائے بیٹے اور داماد کیوں باہر بھیجے ہوئے ہیں۔

وزیراعظم نے کہا کہ سب جانتے ہیں کہ ملک کی عدالتیں اس دور میں آزاد ہیں، نوازشریف تب آئے گا جب یہ سمجھیں کہ ان کے کیسز ختم ہوجائیں گے، شہباز شریف کی اچکن ضائع ہوجائے گی۔

عمران خان نے کہا کہ جہانگیر ترین اور علیم خان سے رابطہ نہیں، وہ جو بھی کریں گے وہ ان کے اوپر ہے وہ جانیں ان کا فیصلہ ہے، پنجاب شریفوں کے ہاتھ میں جانے سے بہتر ہے چوہدری پرویز الہٰی وزیر اعلیٰ ہوں۔

وزیراعظم کا ارکان پارلیمنٹ کے اعزاز میں عشائیہ، اراکین کی تعداد سامنے آگئی

حکومتی ذرائع کا کہنا ہے کہ وزیراعظم کے عشائیہ میں 140ارکان پارلیمنٹ شریک ہیں۔

وزیر اعظم نے کہا کہ ہمیں تمام ممالک سے دوستی کرنی چاہیے، کسی ملک کو حق نہیں پہنچتا یہ کہے کہ اس ملک نہیں جاسکتے، معافی کی بات نہیں اگر ہم اپنی عزت نہیں کریں گے تو کوئی نہیں کرے گا، یہ خط قوم کے لیے ذلت ہے یہ پہلے بھی ملے ہوں گے یہ بیچارے ڈر کر چپ ہوجاتے ہوں گے۔

انہوں نے کہا کہ وہ سمجھے کہ یہ خط دیکھ کر میں بھی ڈرکر چپ ہوجاؤں گا، یہ ذلت کیوں ملی؟ شہباز شریف، نواز شریف اور زرداری جیسے لوگ ہیں جو ہاتھ باندھ کر کھڑے ہیں، دوستی سب سے، غلامی کسی کی نہیں کریں گے۔

عمران خان نے کہا کہ جیت تو ہم گئے، سیاسی جماعت جیتتی تب ہے جب عوام ساتھ ہوں، باہر کی سازش اور یہاں کے غداروں نے جہاں پاکستان کو لاکر کھڑا کردیا ہے بہتر آپشن الیکشن ہے۔

وزیر اعظم نے کہا کہ بہت کم لوگوں کو میری حکمت عملی پتا ہے بات باہر نکل جاتی ہے، 35 سال ان کی حکومت رہی ملک کو لائف سپورٹ مشین پرڈالا کس نے، آپ کو غریبوں کی فکر ہوتی تو پیسا واپس ملک میں لاتے۔

قومی خبریں سے مزید

Original Article

Leave a Reply

Your email address will not be published.